لو بھئی گاجر کا حلوہ

رضوان عباسی نے منگل، ۳۱ جنوری ۲۰۱۲ کو شائع کیا.

دیار غیر میں پاکستانی کھانوں کا اپنا ہی مزہ ہے۔ ویسے تو ہم پاکستانی کھانے بڑے شوق سے بناتے اور  چسکے لے لیکر کھاتے ہیں مگر کچھ کھانے تیار کرنے کیلئے بڑی محنت و مشقت کرنی پڑتی ہے۔ گاجر کا حلوہ بھی انہی لذیذ کھانوں میں سے ایک ہے جسے تیار کرنے کیلئے وقت ، مشقت، اور محنت کیساتھ ساتھ آپ کو پائے کی ہمت اور حوصلہ بھی چاہئے ہوتا ہے۔  سردیوں کا موسم ہو اور گاجر کا حلوہ نہ ہو تو بات کچھ ادھوری ادھوری سی لگتی ہے۔ گھر میں امی جب سردیوں میں گاجر کا حلوہ بناتی تھی تو بڑے مزے لے لیکر کھاتا تھا۔ اگر کبھی وہ گاجریں کدوکش کرنے کا کہتی تو چھوٹے بہین بھائیوں کو کبھی ڈانٹ ڈپٹ کر اور کبھی منت سماجت کرکے گاجریں کدوکش کروا لیتا۔ لیکن یہاں کیا کرتا؟ کس کو ڈانٹتا؟ قاضی صاحب جب ڈھیر ساری گاجریں اور سازوسامان لیکر گھر میں وارد ہوئے تو حکم ہوا کہ گاجروں کو کدوکش کرنے کی ذمہ داری میری ہے۔ پہلے تو قاضی صاحب کو دل میں بہت کوسا، بہت برا بھلا بھی کہا لیکن پھر چپ ہو گیا۔ آپکو بتاتا چلوں کہ میں،  قاضی صاحب، سلیمان بھائی، سمیر بھائی  اور  قیصر بھائی ایک ہی گھر میں رہتے ہیں۔ میں نے قاضی صاحب سے جان خلاصی کی کافی کوشش کی مگر وہ نہ مانے اور مجبورا مجھے انکی چھٹی یا ساتویں آواز پر میدان میں کودنا پڑا۔ چھ سات کلو کے لگ بھگ گاجریں قاضی صاحب نے چھیل کر میری خدمت میں پیش کیں۔ ایک دفعہ پھر دل میں قاضی صاحب کو کوسنے کا سلسلہ شروع ہو گیا۔ اللہ اللہ کرکے میں نے پرانی باتیں بھلا کر گاجریں کدوکش کرنا شروع کیں۔


زندگی کا سفر

رضوان عباسی نے اتوار، ۲۲ جنوری ۲۰۱۲ کو شائع کیا.

بارش کا طوفان برس رہا تھا، دن کی سفیدی رات کی سیاہی میں کافی حد تک گھل مل گئی تھی اور ہماری جیپ ایک اونچے پہاڑ کی بل کھاتی کچی سڑک پر دوڑی جا رہی تھی۔ ہم چند دوست اس جیپ میں سوار ، کچھ ٹینٹ، کچھ بستر ، اشیائے خوردونوش، اور ایک عدد گیس […]

مکمل تحریر پڑھیے »


ضروریات سے خواہشات کا سفر

رضوان عباسی نے اتوار، ۱۵ جنوری ۲۰۱۲ کو شائع کیا.

میرا اور میری قوم کا ایک انتہائی سنجیدہ المیہ ہے۔ ہم دونوں خواہشات کو ضروریات بنا لیتے ہیں۔ ہم اچھی بھلی خوش و  خرم زندگی گزار رہے ہوتے ہیں اورپھر نہ جانے دنیا کی یہ چکا چوندی ہمیں اپنے حصار میں لے لیتی ہے اور ہم اپنی چادر سے زیادہ پاوں پھیلا لیتے ہیں۔ مانا […]

مکمل تحریر پڑھیے »


برفباری

رضوان عباسی نے اتوار، ۸ جنوری ۲۰۱۲ کو شائع کیا.

جنوری کی سیاہ رات میں گرم لحاف کے اندر میں نے اپنا جسم سمیٹا ہوا تھا۔  گھر سے باہر کا درجہ حرارت -8 سیلسیس تھا۔  الارم بجتے ہی میں ایک مرتبہ پھر سر لحاف کے اندر کر کے سو گیا۔ چوتھی مرتبہ الارم بجتے ہی مجھے مجبورا جاگنا پڑا کیونکہ صبح کے 3 بج چکے […]

مکمل تحریر پڑھیے »


اک سرسری نظر ، رضوان نامے پر

رضوان عباسی نے ہفتہ، ۷ جنوری ۲۰۱۲ کو شائع کیا.

رضوان نامہ کی پہلی تحریر میں خوش آمدید ۔ بلاگنگ کی دنیا میرے لیے کافی پرانی ہے۔ میرا پہلا انگریزی بلاگ 2006 میں شائع ہوا اور اس کے بعد    انگریزی بلاگنگ کا سلسلہ ابھی تک جاری ہے۔ میں ایک عرصہ سے محسوس کر رہا تھا کہ اردو بلاگنگ کے جراثیم میرے اندر موجود ہیں۔ آخرکار […]

مکمل تحریر پڑھیے »